ہر سخن کی ترجماں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ- نظم نعت (2018)

لمحہ لمحہ زرفشاں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ
کہکشاں در کہکشاں ہے عید میلاد النبی ﷺ

بانٹنے خوشیاں نکل آئے فرشتوں کے ہجوم
پُر مسرت، شادماں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ

زندگی مجہول لمحوں کی گرفتِ شر میں تھی
زندگی کی پاسباں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ

امن کا پرچم لئے ہر ہر افق پہ خیمہ زن
عافیت کا سائباں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ

بند دروازوں پہ دستک دے رہی ہیں خوشبوئیں
چار جانب گلفشاں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ


حرفِ مبہم کی ردائیں پھینک دیں سارے علوم
ہر سخن کی ترجماں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ

تتلیاں نکلیں چمن سے بن کے تصویرِ ادب
نکہتوں کا کارواں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ

پھول برساتا رہے میرا قلم، میرا سخن
خوشبوئے نطق و بیاں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ

نیند کی ماری ہوئی انسانیت بیدار ہو
آفتابِ ہر جہاں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ

سیدِ سادات ﷺ کے تشریف لانے کی گھڑی
رونقِ بزمِ جہاں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ

زینتِ بزمِ تخیل آپ ﷺ کا ذکرِ جمیل
گرمیٔ کون و مکاں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ

خوشبوؤں کو رقص کرنے کی اجازت عام ہے
عشق کا سیلِ رواں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ

ہر ورق پر خوشبوئیں رکھتی ہیں مدحت کے چراغ
سجدہ گاہِ قدسیاں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ

دونوں عیدیں پیشوائی کے لئے آتی رہیں
تیرا ثانی ہی کہاں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ

ہر صحیفے میں ہے ذکرِ آمدِ خیر البشر ﷺ
افتخارِ مرسلاں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ

دے ریاضِؔ خوشنوا کو یاخدا، لوح و قلم
اِس کے دل پر حکمراں ہے عیدِ میلاد النبی ﷺ