تشنہ بہت ہے مٹی آقا ﷺ مرے بدن کی- نظم نعت (2018)

میری ہے التجا ہو تحسین میرے فن کی
آقا ﷺ، چراغ بانٹے خوشبو مرے سخن کی٭

کھل کر ضرور برسے ابرِ عطا و بخشش
تشنہ بہت ہے مٹی، آقا ﷺ، مرے بدن کی

ٹھنڈی ہوا ادھر سے آتی نہیں ہے آقا ﷺ
صورت بدل گئی ہے کب سے مرے وطن کی

شاخوں پہ اب پرندے آکر نہیں چہکتے
دنیا اجڑ چکی ہے آقا ﷺ مرے چمن کی

کوئی اداس ہو کر بستی سے جا رہا ہے
اترن ملے کسی کو سرکار ﷺ پنجتن کی

میں نے سلام بیھجا ہے عاشق نبی ﷺ کو ٭٭
ٹھنڈی ہوا ملے گی مجھ کو ابھی قرن کی
٭ افطاری سے قبل مسجد نبوی میں لکھی گئی ٭٭ اویس قرنی ؓ