اے شہرِ خنک!- نظم نعت (2018)

اے شہر خنک!
آ، مری آنکھوں میں سما جا
اے شہر خنک!
پھول اُگا کشتِ سخن میں
اے شہر خنک!
اپنا ادب مجھ کو سکھادے
اے شہر خنک!
تشنہ لبی کو بھی مٹادے
اے شہر خنک!
پھر مجھے دامن میں چھپالے
اے شہر خنک!
آبِ خنک مجھ کو پلادے
اے شہر خنک!
اذنِ ثنا خوانی عطا کر
اے شہر خنک!
پھر مجھے سینے سے لگالے
اے شہر خنک!
پیاس کبھی بجھنے نہ پائے
اے شہر خنک!
گنبدِ سرکار ﷺ دکھادے
اے شہر خنک!
مجھ کو مواجھے میں کھڑا کر
اے شہر خنک!
سانس مَیں لوں تیری فضا میں
اے شہر خنک!
مجھ کو سکونت کی اجازت
اے شہر خنک!
خاکِ بقیع ہو مرا مدفن
اے شہر خنک!
دامنِ رحمت میں مجھے رکھ
اے شہر خنک!
میرے تخیّل میں سجا رہ!